Allama Iqbal was a philosopher, poet, and politician in British India who is widely regarded as having inspired the Pakistan Movement. He is considered one of the most important figures in Urdu literature, with literary work in both the Urdu and Persian languages.

Allama Iqbal Essay In Urdu

علامہ اقبال برطانوی ہندوستان میں ایک فلسفی، شاعر، اور سیاست دان تھے جنہیں وسیع پیمانے پر تحریک پاکستان کی تحریک کے طور پر جانا جاتا ہے۔ اردو اور فارسی دونوں زبانوں میں ادبی کام کے ساتھ انہیں اردو ادب کی اہم ترین شخصیات میں شمار کیا جاتا ہے۔

اقبال 1877 میں سیالکوٹ، پنجاب، برطانوی ہندوستان (اب پاکستان) میں پیدا ہوئے۔ انہوں نے ابتدائی تعلیم سیالکوٹ میں حاصل کی اور بعد میں سیالکوٹ کے سکاچ مشن کالج اور لاہور کے گورنمنٹ کالج سے تعلیم حاصل کی۔ اس کے بعد وہ ٹرنٹی کالج، کیمبرج اور یونیورسٹی آف میونخ میں فلسفہ، سیاست اور معاشیات کا مطالعہ کرنے چلا گیا۔

اقبال کا ادبی کام رومی اور دیگر کلاسیکی فارسی شاعروں کے ساتھ ساتھ گوئٹے اور نطشے کی شاعری سے بھی گہرا متاثر تھا۔ ان کی شاعری میں اکثر روحانی بیداری، خدا کی فطرت اور معاشرے میں فرد کے کردار کے موضوعات کو تلاش کیا جاتا ہے۔

اقبال کی سب سے مشہور تصانیف میں سے ایک ان کی نظم “لب پہ آتی ہے دعا بن کے تمنا میری” ہے جو اکثر پاکستان میں بچوں کو پڑھائی جاتی ہے۔ یہ نظم اس خیال کا اظہار کرتی ہے کہ دعا نیکی کے لیے ایک طاقتور قوت ہے اور لوگوں کو رکاوٹوں کو دور کرنے اور اپنے مقاصد کے حصول میں مدد کر سکتی ہے۔

اقبال کی ایک اور مشہور نظم “اسرارِ خودی” ہے، جس میں نفس اور فرد کی روحانی نشوونما اور خود شناسی کی صلاحیت کا پتہ چلتا ہے۔ یہ نظم اقبال کی سب سے اہم فلسفیانہ تصانیف میں سے ایک سمجھی جاتی ہے اور اہل علم نے اس کا بڑے پیمانے پر مطالعہ اور تشریح کی ہے۔

اقبال نے کئی غزلیں بھی لکھیں، جو فارسی شاعری کی ایک شکل ہے جو اکثر محبت، نقصان اور خواہش کے موضوعات کو تلاش کرتی ہے۔ یہ غزلیں اپنی خوبصورت اور پیچیدہ زبان کی وجہ سے مشہور ہیں اور اردو شاعری کی بہترین مثالیں سمجھی جاتی ہیں۔

اقبال کی شاعری کو پاکستان اور وسیع تر مسلم دنیا میں بڑے پیمانے پر پڑھا اور سراہا جا رہا ہے۔ ان کے نظریات اور ادبی کام ہر عمر اور پس منظر کے لوگوں کو متاثر اور متاثر کرتے رہتے ہیں۔

اقبال اپنے ادبی کام کے علاوہ سیاسی طور پر بھی متحرک تھے۔ وہ آل انڈیا مسلم لیگ کے رکن تھے اور برطانوی ہندوستان میں ایک علیحدہ مسلم ریاست کے تصور کی تخلیق میں اہم کردار ادا کرتے تھے، جو بالآخر پاکستان بن جائے گی۔

علامہ اقبال ایک گہرے مذہبی آدمی تھے اور ان کی شاعری اکثر خدا پر ان کے پختہ یقین اور روحانی تکمیل کی اہمیت کی عکاسی کرتی ہے۔ ان کی بہت سی نظمیں فرد اور خدا کے درمیان تعلق، اور ایک منصفانہ اور مساوی معاشرے کی تشکیل میں فرد کے کردار کو تلاش کرتی ہیں۔

اقبال نے اپنی شاعری کے علاوہ کئی فلسفیانہ کام بھی لکھے جن میں انہوں نے خدا کے تصور اور کائنات کی فطرت کو دریافت کیا۔ ان کاموں میں، اس نے روایتی اسلامی نظریات کو جدید فلسفیانہ فکر سے ہم آہنگ کرنے کی کوشش کی۔

اقبال کے سیاسی نظریات بھی ان کے مذہبی عقائد سے گہرے متاثر تھے۔ ان کا ماننا تھا کہ برطانوی ہندوستان میں مسلم کمیونٹی کو اپنے مفادات کے تحفظ اور اپنے طرز زندگی کی حفاظت کے لیے اپنی شناخت اور زیادہ سے زیادہ حقوق اور خودمختاری کا مطالبہ کرنے کی ضرورت ہے۔ اس کی وجہ سے وہ ایک علیحدہ مسلم ریاست کے خیال کی حمایت کرنے لگے، جو بالآخر پاکستان بن جائے گی۔

اقبال کے نظریات اور ادبی کام کا پاکستان اور وسیع تر مسلم دنیا میں مطالعہ اور تعریف کی جاتی ہے۔ انہیں اکثر “مفکرِ پاکستان” (پاکستان کا مفکر) اور “حکیم الامت” کہا جاتا ہے۔ ان کی سالگرہ، 9 نومبر کو پاکستان میں قومی تعطیل کے طور پر منایا جاتا ہے۔

جس کی خوشبو مجھے مسمار کیا کرتی ہے

میں اسی قبر پہ پھولوں کی طرح کھلتا ہوں

بارہا جسم نے پھر ذہن نے بیچا ہے مجھے

کیا میں قدرت کی دکانوں میں رکھا سودا ہوں

Find more Essays on the following Topics

Essays
My Hobby Essay In English
Why I Love Pakistan Essay In English
My Best Teacher Essay In English
Global Warming Essay In English
My Favourite Personality Essay
English Essay On COVID-19
Libraries Essay With Quotations
A Scene At Railway Station Essay
My Last Day At College Essay
Essay On Our National hero
Allama Iqbal Essay In English
Essay On Load Shedding In English
Essay On Picnic At Seaside In English
Courtesy Essay With Quotations For Class 10th & 12th
Floods In Pakistan Essay In English
A True Muslim Essay In English
Corruption In Pakistan Essay In English
Blessings of Science Essay in English
Essay on Qaid-e-Azam Muhammad Ali Jinnah With Quotations